Ultimate magazine theme for WordPress.

صوبائی حکومت چور اور وفاقی حکومت نااھل ہے: گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس

0 108

کراچی (آن لائن نيوز روم) ۔گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس (جی ڈی اے )نے واضع کیا ہے کے کراچی لاوارث نہیں ہم اس کے وارث ہیں کراچی کی عوام پیر صاحب پگارا کے ساتھ ہے،سندھ حکومت کرپٹ اور وفاقی حکومت نااہل ہے،وفاقی حکومت نے ہم سے کیے گئے وعدے پورے نہیں کیے،ان خیالات کا اظہار جی ڈی اے کے انفارمیشن سیکریٹری سردار عبدالرحیم ،عرفان اللہ مروت،ایم پی اے نصرت سحر عباسی، نند کمار گوکلانی، این پی پی کے جنرل سیکریٹری نعیم الرحمان،فنکشنل لیگ سندھ کے نائب صدر سید شفقت حسین شاہ، کراچی کے کنوینئر بیریسٹر ارشد بلوچ نے کراچی پریس کلب میں مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا،اس موقع پر  جی ڈی اے کے ترجمان سردار رحیم نے کہا کے حکومتوں کی نااہلی کے باعث عوام سفر کر رہی ہے عوام کا جینا محال ہوگیا ہے ،بجلی کی بدترین لوڈ شیڈنگ کے باعث عوام تنگ آچکا ہے، انہوں نے کہا کے کراچی لاوارث نہیں پیر صاحب پگارا شہر کا وارث ہے، کے الیکٹرک کو ختم کرکے دیگر کمپنیوں کو بجلی فراھم کرنے کا لائسنس دیا جائے، اس موقع جی ڈی اے کے رہنما پر عرفان اللہ مروت کہا ہےکہ ہم حکومت کے اتحادی ضرور ہیں مگر ہمارا نکاع نہیں ہے،اتحاد رہ بھی سکتا ہے،اور ختم بھی ہوسکتا ہے،انہوں نے کہا کے جی آء ٹی کے بچے بھی ابھی آرہے ہیں جس میں زرداری سمیت بہت سے نام آئے ہیں ،انہوں نے کہا کہ ہر جگہ عوام خوار ہے،پی ٹی آء والے خود لوڈ شیڈنگ اور کے الیکٹرک کے خلاف احتجاج کررہی ہے ہم کس کے پاس جائیں پی ٹی آء والے اور پیپلز پارٹی والے دو سالوں سے آپس میں لڑرہیں ہیں،صوبائی حکومت کے کارنامے جی آء ٹی میں سامنے آررہیں ہیں،عمران خان کو عوام کا دکھ ہے پر انہوں نے حکومت بچوں کے حوالے کردی ہے جو سارا دن ڈگھ  ڈگھی بجا رہے ہیں،ہمیں عمران خان سے بڑی امیدیں وابستہ تھی مگر ہم سے کیے گئے وعدے پورے نہیں کیے گئے،بجلی ہے نہیں اور بل ہزاروں میں دیا جارہا ،سردار عبدالرحیم نے کہا کہ صوبائی حکومت چور اور وفاقی حکومت نااھل ہے، معمولی بارش نے حکومت کی قلعی کہول دی ہے،گلی محلوں کی صفائی کے دکھاوی سے نکاسی پانی کا مسئلا حل نہیں ہوگا،عوام کے صبر کا پیمانہ اب  لبریز ہوگیا ہے ،جی ڈی اے عوام کی برملا طور پر نمائندگی کرے گے،وفاقی وزیرعمر ایوب کی ہم نے بڑی کلاس لی ان کی وزارت مہنگائی اور نااہلی کی وزارت ہے،ایم پی اے نصرت سحر عباسی نے کہا کہ مراد علی شاھ کے حلقے میں معصوم وزیراں سمیت سینکڑوں بچیاں قتل کی گئی ہیں ،وزیراں کے جسم پر انیک تشدد کے نشانات تھے اور ان کا مغز باہر تھا کوئی حکومتی نمائندہ ان سے پوچھنے نہیں گیا وزیراعلی کو اس عہدے پر رہنے کا حق نہیں ،گدو ہسپتال کے ایم ایس آفیس پر تو چار کروڑ روپئے خرچ کیے گئے،مگر مریضوں کے کپڑے اور برتنوں کو دونے کے لیے پیسے نہیں ہیں،وزیر اعلی کو اگر شاعری سنانی ہے تو مشاعرہ کروالے،وزیر اعلی اور وزیر سارا دن اسیمبلی میں جھوٹ بولتے ہیں ،لوگوں کو کہا جاتا ہے کے گھروں میں رہے بجلی سارا سارا دن نہیں ،کیا لوگوں کو مرنا ہے،کربوں روپئے کہاں خرچ ہورہے ہیں ،ایم پی اے نند کمار گوکلانی نے کہا کہ سندھ میں اقلیت غیر محفوظ ہے ،47 ع کے بعد منارٹی قوانین میں ترامیم نہیں کی گئی ہم سندھ میں بڑے پریشان ہیں ،قانونسازی کے لیے بیشمار  بل جمع کرائیں ہیں مگر ان پر قانون سازی نہیں کی جارہی،پیپلز پارٹی کے دہرے چہرے ہیں،منارٹی کو تمام قانونی حقوق دیے جائیں،سردار عبدالرحیم نے کہا کہ پیر صاحب پگارا اور ان کے خاندان نے ہمیشہ اقلیتوں کو تحفظ دیا ہے،انہوں نے کہا کے پیپلز پارٹی والے کہتے ہیں کے کراچی والے یتیم ہیں مگر کراچی ہم مالکی  کریں گے،ہم وفاقی حکومت الگ نہیں ہونے جارہی ہے ہم ان کو صحیح سمت میں لانا چاہتے ہماری پازیٹو تنقید ہے،ہم وفاقی حکومت کے خلاف تحریک شروع نہیں کررہے اگر عوام عوامی مسائل پر روڈوں پر ہوگی تو ہم عوام کے ساتھ ہیں،کے الیکٹرک کے مالک کا پتہ نہیں ہے کے یے کمپنی کون چلا رہا ہے،اس لیے ہم نے وفاقی حکومت کے سامنے یہ تجویز رکھی ہے کے دیگر الیکٹرک کمپنیوں  کو لائسنس دیا جائے،

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.